مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
آرٹیکلز
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
یہ کہاوت اپنی جگہ بالکل درست ہے کہ جو ڈر گیا وہ مر گیا، لیکن یہ سچائی بھی اپنی جگہ ہمیشہ سے قائم دائم ہے کہ ڈرایا صرف اسی کو جاتا ہے جو ڈرنا چاہتا ہے۔ہمار ا ارادہ، ہماری ہمت اور ہمارا حوصلہ غیر متزلزل ہو تو یقین کیجیے زندگی کے کسی بھی
میں اور عمران خان
عمران خان کے سیاست میں آنے سے پہلے سن1990میں گورنمنٹ کالج میں فنڈ ریزنگ کیلئے عمران کے آنے کی نوید سنی تو میں بھی ان پرستاروں میں سے ایک ہوں جو عمران خان کو بچپن ہی سے اپنا ہیرو تصور کرتا تھا کیونکہ میں خود کرکٹ ٹیم کا کپتان تھا اور میری ٹیم کنگز کرکٹ
محبت، عادت یاضرورت
زندگی میں ہر کام مالی منفعت کے لیے نہیں کیا جاتا ،بہت سے کام دل کے سکون اور روح کی کی طمانیت کے لیے بھی کیے جاتے ہیں لیکن تعریف اور ستائش کی خواہش ہر حال میں انسانی جبلت کا حصہ رہتی ہے۔مالک تھپکی نہ دے، کمر پر دھیرے دھیرے نہ سہلائے تو
دعائیں دل سے نکلتی ہیں التجا بن کر!!!!!!!!!!!
’My name is Khan and I am not a terrorist‘۔۔۔۔آپ سب کو ’مائی نیم از خان ‘نام کی ہندی فلم کا یہ ڈائیلاگ ضرور یاد ہوگا۔ 2010کے ابتدائی دنوں میں ریلیز ہونے والی اس فلم کو اپنے اچھوتے موضوع کے حوالے سے بالخصوص مسلمان حلقوں میں بہت سراہا گیا تھا، مسلمان سمجھتے تھے
خدا کے بندوں سے پیار کرنا ہی زندگی ہے!!!!!
آئیے آج آپ کو ایک ایسے شہر کی سیر کرائیں جہاں انسانوں کو مارنے کے نت نئے ہتھیار تیار کیے جاتے ہیں۔ یہ ہے بھارت کا شہر چالیکرے(Challakere)۔ بنگلور سے کوئی دو سو کلومیٹر فاصلے پر واقع اس شہر کو ایک زمانے میں آئل سٹی اور سائنس سٹی بھی کہا جاتا تھا مگر
خزاں رسیدہ درختوں پے پھل نہیں لگتا!!!!
ابھی چند روز پہلے کی بات ہے، مجھ جیسے غیر سیاسی آدمی کو قومی اسمبلی کے ایک امیدوار نے اپنی کارنر میٹنگ میں شرکت کے لیے بہت اصرار سے مدعو کر لیا۔الیکشن لڑنے والوں کا ایک نفسیاتی مسئلہ یہ بھی ہے کہ وہ کامیابی سے پہلے ہی خود پر وہ حلیہ مسلط کر لیتے
نیا موسم تمہارا منتظر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
برداشت اور تحمل اصل میں ایک ہی صفت کے دو نام ہیں۔جہاں تک میدان سیاست کا تعلق ہے برداشت اور تحمل کے بغیر اس میدان میں کامیابی کا کوئی تصور ہی نہیں۔ لوگوں کی باتیں ، احسان فراموشیاں،اقرباء کی ناجائز فرمائشیں اور بے جا الزامات کی بارشیں، سیاست دان کی جھولی ان چیزوں سے
وصال و ہجر کا قصہ بہت پرانا ہے
ہم کتابیں لکھ رہے ہیں اور اس بات پر خوش ہورہے ہیں کہ ہماری قوم میں کتب بینی کا رجحان بڑھ رہا ہے مگر دیکھنا یہ ہے کہ یہ کتابیں کہیں ان عامیانہ ناولوں کی طرح تو نہیں جو نکمے اور کام چور طالب علم امتحان سے ایک رات پہلے درسی کتابوں کے
دشمنوں کے درمیان ایک کتاب
آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل اسد درانی اور را کے سابق سربراہ امرجیت سنگھ کی مشترکہ کتاب دا سپائی کرانیکلز کے ٹوٹے! ہم دونوں ایک صفحے پر تو ہیں، پر ہماری کتابیں الگ الگ ہیں ، لمبے قد کے امرجیت سنگھ دلت نے دائیں آنکھ میچتے ہوئے پنجابی زبان میں جملہ کسا
خواہشوں کے صحرا میں خواب چھائوں کرتے ہیں
ہم پاکستانیوں کا ایک بڑا مسئلہ یہ بھی ہے کہ ہم ضرورت سے زیادہ رحم دل ہوتے ہیں، ترس کھانے میں دیر نہیں کرتے۔کسی کو ذرا سا دکھ میں دیکھا تومدد کی غرض سے ممکن حدوں کو بھی پار کرجاتے ہیں۔ساری فلم میں لوگوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑنے والا ولن،
اولڈ مین کی لالٹین
مغربی ممالک میں عمر رسیدہ افراد کے لیے بنائے گئے اولڈ ہومز کو دیکھ کر ہمارے ہاں رحم کھانے کا رویہ بھی نہایت عجیب ہے۔ہم مغرب سے اپنا تقابلی موازنہ کرتے ہوئے ان اولڈ ہومز کو مغرب کے زوال کی ایک بہت مضبوط دلیل کے طور پر پیش کرتے ہیں۔ہمارے
ساجد جاوید کی کامیابی کا راز
برطانیہ کی تاریخ میں ایک نئے باب کا اضافہ ہوا ہے۔ ۴۹ سالہ پاکستانی نژاد ساجد جاوید جنہیں پارلیمنٹ میں منتخب ہوئے محض آٹھ سال ہوئے ہیں برطانیہ کی تاریخ میں ، نسلی اقلیت سے تعلق رکھنے والے پہلے فرد ہیں جو وزیر داخلہ کے عہدہ پر فایز ہوئے ہیں۔ اس عہدہ کی راہ ،
خواب جھلستے جاتے ہیں اک معصوم سی لڑکی کے
کسی بھی عورت اور اس کے متعلقین کے لیے سب سے مقدس اور سب سے اہم چیز اس کی عفت اور عزت ہوتی ہے۔ اسی لیے دنیا بھر کے انتہائی وحشی معاشروں میں ر یپ کو ایک جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔اس حوالے سے مقبوضہ
میں نے لکھا جو’ دل‘ تو ورق لال ہوگیا!!!!!
امریکا میں معاملات کو ہماری نظر سے نہیں دیکھا جاتا۔ امریکا ہی نہیں، دنیا کے ہر ترقی یافتہ اور مہذب معاشرے میں معاملات کو دیکھنے کا ایک الگ زاویہ ہوا کرتا ہے۔گذشتہ دنوںجب ہمارے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نجی دورے پر امریکا گئے تو ائرپورٹ پر انہیں عام مسافروں کی طرح
وہ دیوتا ہے مگر مجھ کو جانتا ہی نہیں!!!
آج کے کراچی میں آج سے بیس برس پہلے کے کراچی کو ڈھونڈنا خواب تو ہو سکتا ہے حقیقت کی تلاش نہیں۔بڑھتی آبادی کے اژدھام میںآسمان کو چھوتی بلند و بالا عمارتوں نے کراچی کا منظر کچھ ایسا بدلا کہ یہاں برسوں سے آباد لوگوں کے لیے اپنے گھر کا راستہ
ہمارا ٹی وی ۔۔ حسِ مزاح اور تمسخر میں فرق کرنے کی ضرورت۔
پاکستان ٹی وی اور ریڈیو سے وابستہ ماضی کی بڑی شخصیات کے انٹرویوز میں ایک بات مشترک ہوتی ہے کہ ان کے زمانے میں پروگرام ترتیب دیتے وقت بہت سوچ وچار کی جاتی تھی۔ ان پروگراموں کا مقصد محض تفریحی یا معلوماتی ہی نہیں ہوتا تھا بلکہ اس امر کو بھی یقینی بنایا جاتا تھا
روشنی
حضرت ابوبکر صدیقؓ رسول اللہؐ کے حلیف تھے، آپ کا اسم مبارک عبداللہ تھا، ابوقحافہ عثمان بن عامر بن عمرو بن کعب بن سعد بن تیم بن مرہ بن کعب بن مصری بن غالب القرشی الیتمی کے بیٹے تھے۔آپ کا سلسلہ نسب رسول اللہؐ کے ساتھ مرہ بھی جاملتا ہے، نووی تہذیب میں لکھتے ہیں
عمران خان مارگریٹ اور میں
عمران خان کی تسیری شادی پر تبصرے، تجزیئے، اور خبریں جاری ہیں سوشل میڈیا پر بڑی دلچسپ جگت بازی بھی ہو رہی ہے پرنٹ میڈیا تو کچھ سماجی، سیاسی اور مذہبی اقدار کی زمہ داری نبھا رہا ہے لیکن الیکٹرونک اور سوشل میڈیا شتر بے مہار کی طرح جو چاہے کر گزرے
کپتان عمران خان کے نام
عمران خان آپ نے نے ۱۹۹۲ سے لیکر ۲۰۱۱ تک اپنی پارٹی، پاکستان تحریکِ انصاف بنانے کیلیے دن رات ایک کیا، ذلتیں برداشت کیں، حکمران جماعتوں سے ٹکر لی، فوج کا چہیتا، طالبان خان اور یہودی لابی کا مہرہ ہونے کے طعنے سنے۔ کیا روشن خیال کیا قدامت پسند، جاگیردار اور سرمایہ
previous1234567next