مقبول خبریں
اولڈہم کونسل کےشعبہ جات میں کام کرنے والے افراد کی حوصلہ افزائی کیلئے ایوارڈز تقریب
پاکستان اور بھارت کے درمیان سب سے بڑا مسئلہ کشمیر کا حل ہے: چوہدری فواد حسین
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
مدینہ مسجد یو کے اسلامک مشن میں سیرتِ سرورِ کائنات ؐ کا انعقاد ،مہمانان گرامی کا والہانہ استقبال
تم آگ کا دریا ،میں سمندر کی ہوا ہوں!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
سکولوں سے خارج کردہ بچے پرتشدد کاروائیوں کے مرتکب ہوسکتے ہیں:برنارڈو پارلیمنٹری تحقیق
لندن:برنارڈو اور آل پارلیمنٹری گروپ کے لیئے خصوصی تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ جن بچوں کا سکول سے خارج کردیا جاتا ہے وہ چاقو کے جرم اور پرتشددکاروائیوں میں ملوث ہونے کے خطرے میں ہو سکتے ہیں ۔برنارڈو جو کہ برطانیہ میں بچوں کی فلاح و بہبود کا معروف ادارہ ہے ۔ اس نے برطانیہ کے تمام مقامی حکام کا سروے کیا اوردریافت کیا کہ تین میں سے ایک PRUمیں ان نکالے گئے بچوں کے لیئے کوئی گنجائش ہی نہیں تھی ،برنارڈو کے زیر اہتمام کروائی جانے والی"یوگوو پولنگ"سے ثابت ہوتا ہے کہ برطانیہ میں والدین کی اکثریت چاقو کے جرم اور پرتشدد کاروائیوں میں اضافے کے سبب فکرمند ہیں۔72%والدین کا خیال ہے کہ سکول سے خارج کیئے جانے والے بچوں کا ان جرائم میں ملوث ہونے کا خطرہ زیادہ ہے ۔جرائم کی تعداد میں اضافے کے ثبو ت سے پتہ چلتا ہے کہ وہ بچے جنہیں PRUمیں ہمہ وقت مصروفیت کی پیش کش نہیں کی جاتی وہ مجرمانی سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے خطرے میں ہیں ۔آج کے اعداد و شمار کے مطابق 2014میں خارج کیئے جانے والوں میں 56%اضافہ ہوا ہے۔اور بڑھتے ہوئے غیر قانونی اخراجات ان طلبا کی حمایت میں ہونے سے یہ ایک بحران کی شکل اختیار کرتا جا رہا ہے ۔برنارڈو نوجوانوں کی صحت پر کام کرنے والے خیراتی ادارے "ریڈتھریڈـ"اور آل پارلیمنٹیری گرو پ کے ساتھ کام کر رہی ہے جبکہ کرائیڈن کی مرکزی ایم پی سارہ جانز کی سربراہی میں چاقو کے جرائم کی وجوہات پر تحقیق کر رہے ہیں ۔ماہرین کا ایک پینل جس میں بچوں کے کمشنر ان لونگ فیلڈ بھی شامل ہیں آج APPGکے سامنے تجاویز پیش کریں گے کہ کس طرح خارج کیئے جانے والوں اور جرائم میں تعلق توڑا جا سکتا ہے ۔ اجلاس اس اجلاس میں برنارڈو حکومت سے مطالبہ کرے گی کہ خارج شدہ بچوں کے لیئے اعلیٰ معیاری مدد کو فوری طور پر بڑھائیں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ وہ بچے مکمل طور پر تعلیم کے حصول میں مصروف رہیں ۔انفارمیشن ایکٹ کے تحت برنارڈو کی طرف سے حاصل کردہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ خارج شدہ بچوں کے لیئے متبادل فراہمی اپنے اختتام پرہے ۔پورے برطانیہ سے 47کونسلز نے یہ انکشاف کیا ہے کہ یکم جولائی 2018تک ریاستی PRUمیں کوئی جگہ خالی نہیںتھی۔"یوگوو"کی پولنگ کے مطابق والدین کی اکثریت کا یہ خیال ہے کہ پچھلے سال کی نسبت اس سال زیادہ بچے چاقو کے جرم اور پرتشدد کاروائیوں میں ملوث ہوررہے ہیں۔77%والدین جو یہ سمجھتے ہیں کہ جرائم بڑھ رہے ہیں وہ اس بات کے لیئے فکر مند ہیں ۔جبکہ سروے کے مطابق72%والدین کا خیال ہے کہ جن بچوں کو سکول سے خارج کیا جاچکا ہے وہ ان مسائل کا شکار بن سکتے ہیں ۔65%والدین کا خیال ہے کہ اسکول سے خارج کیئے جانے والے بچوں کو چاقو کے جرم اور پرتشدد کاروائیوں میں ملوث ہونے سے روکنے کے موثر اقدامات موجود نہیں ہیں ۔برنارڈو کے سرپرست اعلیٰ جاوید خان کا کہنا ہے کہ نوجوانوں کو سنگین پرتشدد کاروائیوں سے روکنا ہر ایک کی ذمہ داری ہے اور پولیس کے ساتھ ساتھ اسکولوں اور فلاحی اداروں کو بھی کلیدی کردار ادا کرنا ہوگا۔ بچے کو اسکول سے نکالنا ٓخری ترجیح ہونی چاہیے۔تمام بچوں کو ہمی وقت اعلیٰ معیاری تعلیم تک رسائی ہونی چاہیے جو ان کو اچھے گریڈز حاصل کرنے کے بہترین مواقع فراہم کرے تاکہ وہ نقصانات سے بچ سکیں ۔ہم یہ بات جانتے ہیں کہ جن بچوں کو مرکزی حیثیت رکھنے والے اسکولوں سے نکال دیا جاتا ہے وہ مجرمانہ سرگرمیان رکھنے والے گروہوں کا آسانی سے شکار بن سکتے ہیں ،ہم حکومت سے درخواست کرتے ہیں کہ کوئی ایسا لائحہ عمل بنایا جائے جس کے تحت کم سے کم بچے اسکول سے نکالے جا سکیں اور متبادل مواقع کی فراہمی کا معیار بہتر کیا جائے تاکہ ان طلبا کو وہ مدد ملے جو انہیں ایک بہتر مستقبل کے لیئے درکار ہے ۔سرپرست اعلیٰ آل پارلیمنٹری گروپ برائے جرائم چاقو زنی اور کرائیڈن(سینٹرل) کی ایم پی، سارہ جونز نے کہا" ریکارڈ ـز کے مطابق چاقو زنی کی وارداتیں بلند ترین سطح پر ہیں۔ یہ ایک سماجی بحران ہے جس کے لیئے ہمارے اسکول فرنٹ لائن پر ہیں ،اسکول سے نکال جانے والے بچوں کی تعداد بڑھ رہی ہے اور بہت سے کیسز ایسے ہیں ایسے بچوں کے لیئے کوئی جگہ باقی نہیں ہے ۔یہ صورتحال بہت تکلیف دہ ہے ۔اسکولوں کو اس مشکل وقت میں طلباء کی مدد کرنے کے لیئے وسائل کی ضرورت ہے ،پیشہ وارانہ صلاحیتوں کے حامل فرادPRU"سے جیل پائپ لائن تک" پر تبصرہ کرتے ہیں کہ یہ سسٹم نوجوان نسل کو ناکامی کی طرف لے کر جا رہا ہے ،ریڈیو تھریڈ کے چیف ایگزیکٹوجان پوئیٹن کا کہنا ہے ـ"نوجوانوں میں تشدد کا رجحان صحت کے مسائل میں سے ایک ہے جس میں انہیں عدم مساوات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، جیسا کہ دوسرے امراض میں تشخیص ضروری ہے اسی طرح یہ بھی پتا کرنا ہوگا کہ نوجوان کس طرح تشدد کی کاروائیوں میں ملوث ہوجاتے ہیں۔یہ تحقیق اس بات کو اجاگر کرتی ہے کہ تعلیمی سرگرمیوں کی کمی اس کی بنیادی وجوہات میں سے ایک ہے جو کہ نوجوانوں کو جرائم پیشہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے کی وجہ بن سکتی ہے ۔