مقبول خبریں
کشمیر سالیڈیرٹی کیلئے یکم فروری سے 11فروری تک تقریبات منعقد کرائی جائیں گی
پیپلزپارٹی کے رہنما ندیم اصغر کائرہ کی پریس کانفرنس ،صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیئے
واجد خان ایم ای پی کا آزاد کشمیر سے آئے حریت کانفرنس کے رہنمائوں کے اعزاز میں عشائیہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے زیر اہتمام پہلی کشمیر کلچرل نمائش کا اہتمام
دسمبر بے رحم اتنا نہیں تھا!!!!!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ایف پی سی سی آئی کے نمائندہ وفد کا برطانوی ہائوس آف لارڈز کا دورہ ، لارڈ نذیرنے استقبال کیا
لندن: پاکستان کی نئی حکومت پاک برطانیہ تعلقات کو بڑی اہمیت دیتی ہے، اس دور حکومت میں دونوں ممالک کے درمیان باہمی تجارت کے حجم میں قابل قدر اضافہ ہوگا، یہ کہنا تھا برطانیہ کے دورے پر آئے ایف پی سی سی آئی کے نمائندہ وفد کا، برطانوی ہائوس آف لارڈز کے دورے پر آئے فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس کے وفد کا استقبال لارڈ نذیر احمد نے کیا، وفد کو دورے کے دعوت پاک بریٹن بزنس کونسل اور پاکستان یوکے بزنس کونسل نے دی تھی جسکے روح رواں جولین ہیملٹن بھی اور راشد اقبال بھی اس موقع پر موجود تھے۔ لارڈ نذیر احمد نے مہمانوں کو ہائوس آف لارڈز کی تاریخ بتاتے ہوئے پاک برطانیہ دوطرفہ تعلقات کی تاریخی اہمیت سے بھی آگاہی دی۔ جولین ہملٹن نے کہا کہ پاک بریٹن بزنس کونسل دوبوں ممالک کے درمیان تجارتی حجم کو بڑھانے کیلئے دن رات کوشاں ہے انکا کہنا تھا کہ وہ اکثر اپنے برطانوی کاروباری افراد کو بتاتے ہیں کہ پاکستان اس وقت تیزی سے ابھرتی ہوئے دنیا کی بہترین ریاست ہے جہاں ترقی کی شرح نمو بہت زیادہ ہے پاکستان کی ساٹھ فیصد سے زائد آبادی تیس سال سے کم عمر ہے جو ایک لمبے عرصے تک کام کرنے کی اہل ہے جس بنا پر سرمایہ کار یہاں بخوشی مائل ہورہے ہیں۔ایف پی سی سی آئی وفد کت سربراہ زاہد سعید نے کہا کہ اس امر میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان میں سرمایہ کاری کے پرکشش مواقع موجود ہیں لیکن ہماری بیرون ممالک سے سرمایہ کار کو پاکستان میں لانے کیلئے جامع منصوبہ بندی کی ضرورت ہے، اس کام کیلئے ہمیں ترقی یافتہ ممالک کی معاشی تاریخ پڑھنی ہوگی، انکا کہنا تھا کہ برطانیہ ہمارا بہترین دوست ملک ہے دونوں ممالک کو مل جل کر بریگزٹ کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کے حوالے سے باہمی منصوبہ بندی کرنی چاہیئے جو دونوں ممالک کیلئے سود مند ہو۔چیمبر کے بیس رکنی وفد کو ہائوس آف لارڈز کی سیر بھی کرائی گئی۔