مقبول خبریں
موومنٹ فار دی رائٹس اوورسیز پاکستانیز کے زیر اہتمام ڈوئل نیشنل کو عزت دو بارے تقریب کا اہتمام
پاکستان مادر وطن ہے اسکی حفاظت ہمارا فرض اولین ہے: ڈی جی آئی ایس پی آر آصف غفور
دورے پرحکومت پاکستان،حکومت آزاد کشمیر اور راجہ نجابت کی معاونت کے مشکور ہیں:کرس لیزے
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
یورپ میں مسئلہ کشمیر کو مزید تیزی سے اجاگر کیا جائے گا: تحریک حق خودارادیت
زمین پر دیوار چین
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر میں اساتذہ پر تشدد،لہو لہان کر دیا، میرواعظ نظر بند،کئی رہنما گرفتار
سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فورسز نے ضلع شوپیاں کے ایک درجن سے زائد دیہات میں محاصرے او ر تلاشی کی کارروائی کے دوران شہریوں کو سخت ہراساں کیا ،شاہ گندحاجن کے کوچنگ سنٹر میں اساتذہ کو تشدد کا نشانہ بنا کر لہو لہان کردیاجبکہ5جنوری کو یوم حق خودارادیت منانے سے روکنے کیلئے قابض فورسز نے ایک مرتبہ پھر میرواعظ عمر فاروق کو نظر بند کردیا جبکہ کئی حریت رہنماؤں کو گرفتارکر لیا۔ تفصیلات کے مطابق بھارتی فورسز نے کچہ ڈورہ، چاکو، بٹہ پورہ، لنڈورا، گارہند، مراد پور، بمن، مانتری بوک، حرمین اور دیگر دیہات کو محاصرے میں لیکر تمام داخلی اور خارجی راستے بند کر دیئے ، اہلکار گھروں میں گھس گئے اور خواتین و بچوں سمیت مکینوں کو سخت ہراساں کیا اور گھریلو اشیا کی توڑ پھوڑ کی۔ دریں اثنا بھارتی فوجیوں نے ضلع بانڈی پورہ کے علاقے شاہ گند حاجن میں ایک کوچنگ سنٹر میں گھس کر اساتذہ کو گھسیٹا اور سخت مار پیٹ کا نشانہ بنایا،جس کے باعث کئی اساتذہ لہو لہان ہو گئے ۔واقعہ کیخلاف علاقے کے لوگوں نے زبردست احتجاج کیا۔علاوہ ازیں کشمیریوں کو 5جنوری کو یوم حق خودارادیت منانے سے روکنے کیلئے میرواعظ کو پھرگھر میں نظر بند جبکہ حریت رہنمائوں غلام احمد گلزار، سید امتیاز حیدر، گلزار احمد بٹ، محمد یاسین عطائی، مولوی بشیر احمد اور دیگرکو گرفتارکرلیا گیا، سید علی گیلانی 2010سے گھر میں نظر بند ہیں۔ ادھر مقبوضہ کشمیر کی مشترکہ آزادی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ ڈاکٹر محمد عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے سوپور سانحہ کے 25سال مکمل ہونے پر 6؍جنوری کو سوپور میں مکمل ہڑتال،جامع مسجدسوپور میں نماز ظہرکے بعد جلسہ عام اور مزار شہدا تک جلوس نکالنے کی کال دی ہے ۔ 6؍جنوری 93ء کو بھارتی فورسز کے ہاتھوں سوپور قصبے میں 55عام شہریوں کو شہید کردیا گیا تھا۔انہوں نے عالمی برادری سے اپیل کی ہے کہ وہ سانحہ سوپور اور قتل عام کے اس طرح کے دیگر تمام واقعات کی اپنی سطح پر تحقیقات کرائے اور جنگی جرائم میں ملوث بھارتی فورسز کے اہلکاروں کو انصاف کے کٹہرے تک لانے کیلئے اپنے اثرورسوخ کو استعمال کرے ۔ مزید برآں کٹھوعہ جیل میں شیو سینا کے انتہا پسندوں نے محاذ آزادی کے رہنماعبدالصمد انقلابی پر حملہ کرکے انہیں زخمی کر دیا۔ادھر مقبوضہ کشمیر کے گورنر این این ووہرا نے اسمبلی سے خطاب میں بتایا کہ ریاست میں 5میڈیکل کالجوں کی منظوری دی گئی ہے ۔ جموں ڈویژن میں کٹھوعہ، ڈوڈہ ، راجوری اور کشمیر ڈویژن میں بارہمولہ اور اننت ناگ جبکہ تین نئے میڈیکل کالجوں پر بھی کام سرعت سے جاری ہے ۔ 7000پرائیویٹ سکولوں کیلئے فیس کا ڈھانچہ ترتیب دینے پر غورہورہا ہے ۔گورنر کے خطاب کے دوران ایوان مچھلی منڈی بنا رہا،نیشنل کانفرنس اور کانگریس اراکین نے بی جے پی کیخلاف نعرے لگائے ،اپوزیشن ارکان نے ایوان میں سیاہ پرچم لہرا ئے ، احتجاجاً واک آئوٹ اور دھرنا دیا۔ ممبر اسمبلی انجینئر رشید نے مقبوضہ کشمیر میں شہری ہلاکتوں پر ایوان میں احتجاج کیا۔