مقبول خبریں
انتخابات کے بعد ن لیگ اور پیپلز پارٹی سے اتحاد نہیں ہو سکتا: چیئرمین تحریک انصاف
مسئلہ کشمیرتسلیم شدہ بین الاقوامی کیس ، جسے حل کروانا اقوام متحدہ کی ذمہ داری :راجہ فارو ق حیدر
مسئلہ کشمیر پر سیاستدانوں سے حمایت کیلئے جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت کی سرگرمیوں میں تیزی
میاں محمد نوازشریف اور مریم نواز کی 7 دن کیلئے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست مسترد
مقبوضہ کشمیر میں ایک اور نوجوان جعلی مقابلے میں شہید: جگہ جگہ مظاہرے
پیپلزپارٹی نوٹنگھم کے سابق صدر چوہدری علی شان پی پی پی برطانیہ کے نائب صدر منتخب
سلائو کی میئر عشرت شاہ کا لاہور میں اوور سیز پاکستانیز کمیشن پنجاب کے دفاتر کا دورہ
جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کا ہنگامی آزادی ریاست جموں و کشمیر پلان
خواب جھلستے جاتے ہیں اک معصوم سی لڑکی کے
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر:بھارتی فوج کا کریک ڈائون،گھر گھر تلاشی،جھڑپیں،نظام زندگی مفلوج
سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے ایک بارپھربڑے پیمانے پرکریک ڈاؤن شروع کردیا،مختلف علاقوں کامحاصرہ کرکے گھرگھرتلاشی جبکہ بچوں اورخواتین پرتشددسمیت لوٹ ماربھی کی جانے لگی،صورتحال کیخلاف ہزاروں افرادنے سڑکوں پرآکراحتجاجی مظاہرے کئے ،تاہم قابض فورسزنے وحشیانہ تشددکرتے ہوئے درجنوں مظاہرین زخمی اورمتعددگرفتارکرلئے ،سخت ترین کشیدگی کے باعث مقبوضہ وادی بھرمیں نظام زندگی مفلوج رہا،بازاراورکاروباری مراکزبندتھے جبکہ انٹرنیٹ،موبائل فون اورریل سروس بھی بدستورمعطل رہی ۔اطلاعات کے مطابق ضلع کپواڑہ میں بھارتی فورسز کنن ،پوشہ پورہ اور ترہگام سمیت متعدد علاقوں کو محاصرے میں لیکرچادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کرتے ہوئے گھروں میں گھس گئیں،غاصب اہلکاروں نے لوگوں کو رات کے اندھیرے اور سخت سردی میں کئی گھنٹے گھروں سے باہرکھڑاہونے پر مجبورکر دیاجبکہ تلاشی کے دوران خواتین اوربچوں کوبھی مارپیٹ کانشانہ بنایاگیا،مقامی لوگوں کاکہناتھاکہ بھارتی فوجی نے گھریلو سامان کی توڑ پھوڑ کی جبکہ زیورات و نقدی بھی ساتھ لے گئے ،اسی دوران لوگوں نے شدید احتجاج اور پتھراؤ کیاجبکہ فورسزکی فائرنگ سے متعددافرادزخمی ہوگئے ۔دریں اثنابھارتی فورسز نے خانصاحب بڈگام کے راولپورہ نامی گاؤں کو محاصرے میں لے لیا،تمام راستے مکمل سیل کردئیے گئے اورکسی کوآنے جانے کی اجازت نہ ملی،مقامی لوگوں نے احتجاج کیاتوفورسزنے آنسوگیس کی شیلنگ اورلاٹھی چارج کیاجس سے 4افرادزخمی ہوگئے ۔ادھر پلوامہ اور شوپیان کے 3دیہات میں وسیع پیمانے پر آپریشن کی کوشش کی گئی،جس دوران مظاہرین اورقابض فورسز میں شدیدجھڑپیں ہوئیں، جن میں4 افراد زخمی ہوئے جبکہ3گرفتارکرلئے گئے ۔مزیدبرآں مقبوضہ ریاست بھرمیں کشیدہ صورتحال کے باعث دکانیں،بازاراورکاروباری وتجارتی مراکزبندرہے ،مختلف علاقوں میں سڑکیں سنسان دکھائی دیں جبکہ کٹھ پتلی انتظامیہ کی طرف سے انٹرنیٹ،موبائل فون اورریل سروس بدستوربندرکھی گئی۔