مقبول خبریں
برادری ازم پر یقین رکھتے ہیں اور نہ علاقائی تعصب پر اہلیت کی بنیاد پر ڈاکٹر شاہد کی حمائت کر رہے ہیں
اسلام میں جسطرح خدمت انسانی کی حوصلہ افزائی کی گئی اسکی مثال نہیں ملتی: الصف چیریٹی کی امدادی تقریب
لالچی اور خودغرض ٹور آپریٹرز ں نے اللہ کے مہمانوں سے لوٹ کھسوٹ کا بازار گرم کر رکھا ہے
احتجاج کرنیوالے وزیر اعظم ہائوس آ کر مذاکرات کریں، نواز شریف
کشمیریوں نے بھارت کو بتا دیا وہ جدو جہد آزادی سے پیچھے نہیں ہٹیں گے،علی گیلانی
شیراز خان کی برطانیہ واپسی پر چیئرمین سلطان باہو پیر نیازالحسن سروری قادری کی والدہ کی وفات پر تعزیت
کشمیری اس امر پر متفق ہیں کہ ووٹ انہی کو دیا جائے گا جوحق خود ارادیت کی حمائت کرتے ہیں:کونسلر محبوب بھٹی
برطانیہ میں مقیم کمیونٹی پاکستان سے بے پناہ محبت کرتی ہے، . لارڈ میئر بریڈفورڈکا چھچھ ایسوسی ایشن تقریب سے خطاب
حکومت پنجاب کا اوورسیز کمشنر آفس
پکچرگیلری
Advertisement
روسی صدر ولادی میر پوٹن دنیا کی با اثر ترین شخصیت، امریکی صدر اوبامہ کو پیچھے چھوڑ دیا !!
نیویارک ...معروف امریکی میگزین فوربز نے دنیا کی طاقت ور ترین شخصیات کا خامہ جاری کرتے ہوئے پہلے ایڈورڈ سنوڈون کے معاملے پر اور پھر شام کے مسئلے پر امریکہ کو پسپائی اختیار کرنے پر مجبور کر دینے والے عالمی رہنما ولدی میر پوٹن کو اس مسند پر فائز کیا ہے۔ ہر سام شائع ہونے والی اس مستند لسٹ میں امریکی صدر اوبامہ مسلسل تین سال سے سرفہرست تھے تاہم اب وہ دوسرے نمبر پر چلے گئے ہیں۔ تیسرے نمبر پر چینے صدر ژی پنگ، چوتھے پرپوپ فرانسس، پانچویں پر جرمن چانسلر انجیلا مرکل، چھٹے پر بل گیٹس، ساتویں نمبر پر فیڈرل ریزرو بنک کے چیئرمین بین برنانکے، آٹھویں نمبر پر سعودی عرب کے شاہ عبد اللہ، نویں پر یورپی سنٹرل بنک کے ماریو دراغی اور دسویں نمبر پر امریکی سٹور چین وال مارٹ کے چیئرمین اور امریکی صدر اوبامہ کے دست راست سمجھے جانے والے مائکل ڈیوک رہے ہیں۔ بھارتی وزیراعظم من موہن سنگھ فوربز کی اس فہرست میں گذشتہ برس کے مقابلے میں نو درجے تنزلی کے بعد 28 ویں نمبر پر رہے۔ فوربز کا کہنا ہے کہ ولادی میر پیوتن بارہ برس سے روسی سیاست میں کلیدی حیثیت کے حامل رہے ہیں۔ انہیں مارچ 2012 میں دوبارہ روس کا صدر منتخب کیا گیا تھا۔ پوپ فرانسس جنہیں اس فہرست میں چوتھا درجہ ملا وہ ابتدائی پانچ نمبروں پر موجود شخصیات میں سے واحد ایسی شخصیت ہیں جن کا سیاست سے تعلق نہیں۔ انتیس سالہ فیس بک کے بانی چیئرمین مارک زکربرگ طاقتور نوجوانوں کی لسٹ میں پہلے نمبر پر آئے ہیں۔ اس لسٹ میں دوسرے نمبر پر شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم یونگ ان آئے ہیں جن کی عمر تیس سال ہے۔ اس لسٹ میں تیسری پوزیشن گوگل کے شریک بانیان سرجے برن اور لیری پیج کے حصے میں آئی جن کی عمریں چالیس سال ہیں۔ فوربز کی طاقتور ترین خواتین کی لسٹ میں جرمن چانسلر انجیلا مرکل ہی ہیں جبکہ دوسرے نمبر پر برازیل کی صدر دیلما روسف اور تیسرے نمبر پر بھارت میں کانگریس کی صدر سونیا گاندھی ہیں۔