مقبول خبریں
پاکستان کے نظریاتی استحکام کیلئے مسلم لیگ کو منظم کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے:فدا حسین کیانی
گوادر چیمبر آف کامرس کے نومنتخب صدر گوادر رئیل اسٹیٹ کیلئے اثاثہ ثابت ہونگے: ذیشان چوہدری
کشمیری آزادی کی جنگ لڑ رہےہیں ،یہ انکا پیدائشی حق ہے:چوہدری جاوید ،چوہدری یعقوب
نواز شریف کے دوبارہ پارٹی صدر بننے کی راہ ہموار، شق 203 سینیٹ سے بھی منظور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی فائرنگ، مزید 2 نوجوان شہید
کونسلر وحید اکبر کا آزاد کشمیر کے جسٹس شیراز کیانی کے ا عزاز میں عشائیے کا اہتمام
برطانیہ کے ساحلی شہر سائوتھ ہیمپٹن میں ملی نغموں کی گونج، ڈپٹی میئر کی خصوصی شرکت
ڈاکٹر سجاد کریم کی قیادت میں یورپی پارلیمنٹ کے وفد کا جارحیا پہنچنے پرپرتپاک استقبال
کرپٹ خان
پکچرگیلری
Advertisement
نواز شریف کے بعد اب میرا مقابلہ سندھی لٹیروں سے ہو گا: عمران خان
سکھر: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے اپنی توپوں کا رخ آصف زرداری کی جانب موڑ لیا۔ کہتے ہیں کہ نواز شریف اور آصف زرداری کے درمیان صرف ایک فرق ہے، وہ یہ کہ زرداری آرام سے گھر چلیں جائیں گے اور نہیں کہیں گے کہ انھیں کیوں نکالا۔سکھر میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ پاکستان کے گارڈ فادر کو پاکستان کی عوام نے سڑکوں پر نکل کر شکست دی، اب آنے والے دور میں سندھ کے بڑے لٹیروں سے مقابلہ کرنا ہے جن کے سردار آصف زرداری ہیں۔ اب عوام کے ساتھ مل کر سندھ کے کرپٹ مافیا کو شکست دوں گا۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ سابق وزیرِاعظم میاں نواز شریف نے پارلیمنٹ میں جھوٹ بولا اور اس کے بعد سپریم کورٹ میں بھی جعلی کاغذات جمع کروائے۔ انہوں نے عدالت کے سامنے جھوٹ بولا یہی ان کا جرم ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اپنی کرپشن بچانے کیلئے عدلیہ پر حملے کیے جا رہے ہیں۔ نواز شریف جو خطرناک گیم کھیل رہے ہیں، انھیں جمہوریت کی فکر نہیں بلکہ اپنی دولت کی فکر ہے۔صوبہ سندھ کے بارے میں مستقبل کی پالیسیاں دیتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ہم اقتدار میں آ کر صوبے کی عوام کیلئے ہیلتھ کارڈ بنائیں گے۔ نئے پاکستان میں نئی معاشی، زرعی اور تعلیمی پالیسی دیں گے تا کہ ملک سے غربت کا خاتمہ کیا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی اقتدار میں آ کر قومی احتساب بیورو (نیب) کے ہاتھ مضبوط کرے گی تا کہ کرپشن پر قابو پایا جا سکے۔ اس کے علاوہ پاکستان میں میرٹ سسٹم لے کر آئیں گے۔ پی آئی اے اور واپڈا سمیت تمام اداروں کو مضبوط کریں گے جبکہ نوجوانوں کو کاروبار اور اپنے پاؤں پر کھڑا کرنے کیلئے قرضے فراہم کرینگے۔