مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیریوں کو دبانے کیلئے 7 لاکھ بھارتی فوجی ناکافی: مزید نفری طلب
سرینگر :شوپیاں میں ایک اوربے گناہ طالب علم کی گولیوں سے چھلنی لاش برآمد ہوئی جبکہ دوسری طرف کشمیریوں کی تحریک آزادی کودبانے کیلئے جدید سازو ساما ن سے لیس7لاکھ بھارتی فوج بھی کم پڑگئی اورمزید فورسزکوطلب کرلیاگیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق شوپیاں کے علاقہ ناگہ بل کے رہائشی گوہر احمد کی لاش اسکے گھر سے تھوڑی دور ایک باغ سے ملی، مقتول کے اہلخانہ کا کہنا ہے کہ وہ ہفتہ کی شام کو گھر سے نکلا تھا جبکہ اہل علاقہ نے کہا کہ گوہرکو بھارتی فوجیوں نے شہیدکیااورپھرلاش یہاں پھینک دی۔ضلع شوپیاں میں ہی بھارتی فوج نے 10دیہات کا محاصرہ کر کے سرچ آپریشن کیا جس دوران گھر گھر تلاشی لی گئی، صبح سویرے شروع ہونیوالے آپریشن میں غاصب اہلکارو ں نے کئی گھروں میں مزاحمت پر خواتین اور بچوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جبکہ گھریلو سامان کی توڑ پھوڑبھی کی، مقامی لوگوں نے بلاجوازفوجی کارروائی کیخلاف شدید احتجاج اوربھارت کیخلاف نعرے بازی کی۔ ادھر 7 لاکھ بھارتی فوجی بھی کشمیریوں کی حق وانصاف پرمبنی جدوجہدآزادی کودبانے میں بری طرح ناکام پائے گئے ،چنانچہ بھارت سے فورسز کی مزید 4 بٹالین بھیجی جارہی ہیں، جن میں سے 2 بٹالین سرینگر جموں شاہراہ کی سیکیورٹی پرتعینات ہونگی جبکہ مزید دوبٹالین کو جنوبی کشمیر کے مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہروں سے نمٹنے کیلئے تعینات کیا جائیگا،دریں اثنا سال 2017 میں امرناتھ یاترا کی حفاظت کیلئے بھارت سے لائی گئی پیراملٹری سینٹرل ریزرو پولیس فورس کی 10 کمپنیوں میں سے 5 کمپنیوں کو بھی وادی میں ہی روک لیاگیا اور انہیں بھی جنوبی کشمیرکے اضلاع پلوامہ ،کولگام ،شوپیاں اور اسلام آباد میں تعینات کیا جارہا ہے ۔ اضافی فورسز کو حساس علاقوں میں تعینات کیا جارہا ہے جہاں پر احتجاجی مظاہروں اور مجاہدین کے حملوں کا خدشہ رہتا ہے ۔