مقبول خبریں
یو کے اسلامک مشن یوتھ ونگ لیڈز کی طرف سے عید ملن پارٹی :مسلم و نو مسلم کمیونٹیز کی شرکت
پیغام پاکستان فتویٰ دہشت گردی کیخلاف متفقہ قومی بیانیہ کا کردار ادا کرسکتا ہے: قاری صداقت علی
پیٹر برا کے سابق لارڈ میئر محمد ایوب کا پاک سر زمین پارٹی میں شمولیت کا اعلان
چیئرمین تحریک انصاف عمران خان بھی کروڑوں روپے کے اثاثوں کے مالک
محبوبہ مفتی کی حکومت ختم، صدر رام ناتھ کووند نے گورنر راج نافذ کر دیا
شیر خدا نے نبی پاک کی آواز پر لبیک کہہ کر اسلام سے محبت اور وفا کی عمدہ مثال قائم کی
پیپلزپارٹی ہی آئندہ انتخابات میں چاروں صوبوں میں اکثریت حاصل کریگی:میاں سلیم
جموں کشمیر تحریک حق خودارادیت کا نو منتخب کونسلروں میڈیا نمائندگان کے اعزاز میں افطار ڈنر
دشمنوں کے درمیان ایک کتاب
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیریوں کو دبانے کیلئے 7 لاکھ بھارتی فوجی ناکافی: مزید نفری طلب
سرینگر :شوپیاں میں ایک اوربے گناہ طالب علم کی گولیوں سے چھلنی لاش برآمد ہوئی جبکہ دوسری طرف کشمیریوں کی تحریک آزادی کودبانے کیلئے جدید سازو ساما ن سے لیس7لاکھ بھارتی فوج بھی کم پڑگئی اورمزید فورسزکوطلب کرلیاگیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق شوپیاں کے علاقہ ناگہ بل کے رہائشی گوہر احمد کی لاش اسکے گھر سے تھوڑی دور ایک باغ سے ملی، مقتول کے اہلخانہ کا کہنا ہے کہ وہ ہفتہ کی شام کو گھر سے نکلا تھا جبکہ اہل علاقہ نے کہا کہ گوہرکو بھارتی فوجیوں نے شہیدکیااورپھرلاش یہاں پھینک دی۔ضلع شوپیاں میں ہی بھارتی فوج نے 10دیہات کا محاصرہ کر کے سرچ آپریشن کیا جس دوران گھر گھر تلاشی لی گئی، صبح سویرے شروع ہونیوالے آپریشن میں غاصب اہلکارو ں نے کئی گھروں میں مزاحمت پر خواتین اور بچوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جبکہ گھریلو سامان کی توڑ پھوڑبھی کی، مقامی لوگوں نے بلاجوازفوجی کارروائی کیخلاف شدید احتجاج اوربھارت کیخلاف نعرے بازی کی۔ ادھر 7 لاکھ بھارتی فوجی بھی کشمیریوں کی حق وانصاف پرمبنی جدوجہدآزادی کودبانے میں بری طرح ناکام پائے گئے ،چنانچہ بھارت سے فورسز کی مزید 4 بٹالین بھیجی جارہی ہیں، جن میں سے 2 بٹالین سرینگر جموں شاہراہ کی سیکیورٹی پرتعینات ہونگی جبکہ مزید دوبٹالین کو جنوبی کشمیر کے مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہروں سے نمٹنے کیلئے تعینات کیا جائیگا،دریں اثنا سال 2017 میں امرناتھ یاترا کی حفاظت کیلئے بھارت سے لائی گئی پیراملٹری سینٹرل ریزرو پولیس فورس کی 10 کمپنیوں میں سے 5 کمپنیوں کو بھی وادی میں ہی روک لیاگیا اور انہیں بھی جنوبی کشمیرکے اضلاع پلوامہ ،کولگام ،شوپیاں اور اسلام آباد میں تعینات کیا جارہا ہے ۔ اضافی فورسز کو حساس علاقوں میں تعینات کیا جارہا ہے جہاں پر احتجاجی مظاہروں اور مجاہدین کے حملوں کا خدشہ رہتا ہے ۔