مقبول خبریں
پاکستان کے نظریاتی استحکام کیلئے مسلم لیگ کو منظم کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے:فدا حسین کیانی
گوادر چیمبر آف کامرس کے نومنتخب صدر گوادر رئیل اسٹیٹ کیلئے اثاثہ ثابت ہونگے: ذیشان چوہدری
کشمیری آزادی کی جنگ لڑ رہےہیں ،یہ انکا پیدائشی حق ہے:چوہدری جاوید ،چوہدری یعقوب
نواز شریف کے دوبارہ پارٹی صدر بننے کی راہ ہموار، شق 203 سینیٹ سے بھی منظور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی فائرنگ، مزید 2 نوجوان شہید
کونسلر وحید اکبر کا آزاد کشمیر کے جسٹس شیراز کیانی کے ا عزاز میں عشائیے کا اہتمام
برطانیہ کے ساحلی شہر سائوتھ ہیمپٹن میں ملی نغموں کی گونج، ڈپٹی میئر کی خصوصی شرکت
ڈاکٹر سجاد کریم کی قیادت میں یورپی پارلیمنٹ کے وفد کا جارحیا پہنچنے پرپرتپاک استقبال
کرپٹ خان
پکچرگیلری
Advertisement
بھارت کا یوم آزادی،دنیا بھر میں کشمیریوں نے یوم سیاہ منایا، مودی کے پتلے نذرآتش
سری نگر/نئی دہلی/اسلام آباد:بھارت کے یوم آزادی پردنیا بھر میں مقیم کشمیریوں نے ’یوم سیاہ‘منایا،کنٹرول لائن کے آرپارسمیت مختلف ملکوں میں احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں جس دوران بھارتی پرچم اوروزیراعظم مودی کے پتلے نذرآتش کئے گئے جبکہ فضائیں بھارت مردہ باد،مقبوضہ کشمیرکی آزادی اورپاکستان کے حق میں فلک شگاف نعروں سے گونجتی رہیں،بھارت کے زیرتسلط وادی کشمیر میں مکمل شٹر ڈاؤن ہڑتال اورکاروبارزندگی مفلوج رہا،ادھرپاکستان نے ایک بارپھراپنے عزم کااعادہ کیاکہ کشمیریوں کی جدوجہدآزادی کی بھرپورحمایت جاری رکھی جائیگی۔اطلاعات کے مطابق بھارت کے یوم آزادی پرمقبوضہ وادی میں سید علی گیلانی، میر واعظ ڈاکٹر محمد عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پرمشتمل مشترکہ مزاحمتی قیادت کی اپیل پریوم سیاہ مناتے ہوئے مکمل ہڑتال کی گئی،تمام دکانیں،بازار،کاروباری وتجارتی مراکز،ٹرانسپورٹ اورتعلیمی ادارے بھی بندرہے ،حریت پسندلوگوں نے اپنے گھروں اوردکانوں پرسیاہ پرچم لہراکربھارت سے اپنی نفرت کااظہارکیا،کٹھ پتلی انتظامیہ نے مظاہرے اورریلیاں روکنے کیلئے پوری وادی کوچھاؤنی میں تبدیل کررکھاتھاجبکہ انٹرنیٹ اورفون سروس بھی معطل رہی،جگہ جگہ سخت ناکہ بندی،بعض علاقوں میں کرفیواورلاکھوں سکیورٹی اہلکارتعینات تھے ،تاہم آزادی کے متوالوں نے تمام تررکاوٹیں توڑتے ہوئے بھارتی قبضہ کیخلاف احتجاج کیا،ہزاروں افرادجانیں داؤپرلگاکرسڑکوں پرنکل آئے اور آزادی کے حق میں زبردست نعرے بازی کی،غاصب فورسزنے حسب دستور طاقت کاغیر انسانی استعمال کیاجس کے نتیجہ میں درجنوں کشمیری زخمی ہوگئے جبکہ متعدد کوگرفتارکرلیاگیا۔ دریں اثناآزادکشمیر سمیت پاکستان بھر میں بسنے والی کشمیری کمیونٹی اوردیگرشہریوں نے بھی یوم سیاہ منایا،مظفر آباد،میرپور،کوٹلی،ہٹیاں بالا،بھمبرسمیت مختلف شہروں میں ریلیاں نکالی گئیں،جن میں’کشمیربنے گاپاکستان،بھارت مردہ باد،نریندرمودی ہائے ہائے ،انڈین ڈاگ گوبیک‘جیسے نعرے لگائے گئے جبکہ بھارتی پرچم اورنریندر مودی کے پتلے بھی جلائے گئے ،وفاقی دارالحکومت اسلام آبادمیں حریت کانفرنس کے رہنماؤں نے اقوام متحدہ کے دفتر کے سامنے احتجاجی مظاہرہ اوربھارت کیخلاف زبردست نعرے بازی کی،اس موقع پراقوام متحدہ مبصرین کویادداشت بھی پیش کی گئی جس میں عالمی ادارے سے مطالبہ کیاگیاکہ کشمیریوں کوحق خودارادیت دلانے کاوعدہ پوراکیاجائے ۔کل جماعتی حریت کانفرنس کی آزاد کشمیر شاخ نے اسلام آبادمیں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے بھی احتجاجی مظاہرہ کیا،شرکانے بھارت مخالف بینرزاورپلے کارڈز اٹھارکھے تھے جبکہ نعرے بازی بھی کی گئی۔ادھر کینیڈا، برطانیہ،ناروے ،بیلجئم سمیت مختلف ممالک میں مقیم کشمیریوں نے بھی یوم سیاہ منایا، بھارتی سفارت خانوں اور قونصل خانوں کے باہر احتجاجی مظاہرے کئے گئے جبکہ اقوام متحدہ و عالمی برادری سے کشمیر میں بھارتی مظالم پر اپنی مجرمانہ خاموشی ختم کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔دوسری جانب بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے ایک اورپینترابدلتے ہوئے کہاکہ کشمیر کا مسئلہ گالی اورگولی سے نہیں بلکہ ہرکسی کوگلے لگانے سے حل ہوگا۔70ویں یوم آزادی پرنئی دہلی کے لال قلعہ میں مرکزی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انکا کہناتھاکہ کشمیر کے سلسلے میں بیان بازی اور الزام و جوابی الزام کا سلسلہ بہت چلتا ہے ، ہر شخص ایک دوسرے کو گالی دینے میں مصروف ہے اور مٹھی بھر علیحدگی پسند طرح طرح کے پینترے اختیار کرتے رہتے ہیں، اس لڑائی کو جیتنے کیلئے میرا ذہن بالکل صاف اورحکومت کشمیر کو جنتِ ارضی کی حیثیت واپس دلانے کیلئے پرعزم ہے ،ہمیں کشمیر کے معاملے پر مل کر کام کرنا ہو گاتاہم دہشتگردی اور دہشتگردوں کیساتھ نرم رویہ اختیار کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا،دہشتگردوں کوایک بارپھرقومی دھارے میں شامل ہونے کی دعوت دیتاہوں،وہ آئیں اورملک کے جمہوری نظام کے تحت مذاکرات کریں،بھارت عالمی برادری کیساتھ ملکردہشتگردی کی لعنت کیخلاف لڑ رہا ہے اوراس جنگ میں ہم اکیلے نہیں بلکہ بہت سے ممالک کی ایجنسیاں بھارت کی مددکررہی ہیں،بھارت ہر قسم کے سکیورٹی چیلنج،خواہ وہ بحری راستے سے ہو یا زمینی سرحدوں سے ،کامقابلہ کرنے کا اہل ہے اور فوجی جوان ہر خطرے سے نمٹنے کیلئے تیار ہیں۔