مقبول خبریں
یورپین اسلامک سینٹر کے منتظم اعلیٰ سکالر مولانا محمد اقبال کے والد محترم کی وفات پر اظہار تعزیت
صدرریاست آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان کا برطانوی پارلیمنٹ کا دورہ
پاک برٹش انٹر نیشنل ٹرسٹ کے چیئرمین چوہدری سرفراز کی جانب سے عشائیہ کی تقریب
میاں صاحب نظریے کو سمجھتے نہیں، وقت کے ساتھ مؤقف بدلنا نظریہ نہیں ہوتا:بلاول
مقبوضہ کشمیر :بھارتی فوج کے ہاتھوں ایک اور نوجوان شہید،مظاہرے،جھڑپیں
لوٹن ٹائون ہال میں ادبی بیٹھک، لارڈ قربان نے صدارت کی معروف شعرا کرام کی شرکت
برطانیہ کے ساحلی شہر سائوتھ ہیمپٹن میں ملی نغموں کی گونج، ڈپٹی میئر کی خصوصی شرکت
پاکستان کی سیاسی صورتحال، یورپین یونین جمہوریت کے ساتھ کھڑی ہے : ڈاکٹر سجاد کریم
مودی کی سبکی
پکچرگیلری
Advertisement
ملکہ برطانیہ کا یورپی یونین سے علیحدگی کے سلسلے میں تیار کئے گئے نئے مجوزہ قوانین کا اعلان
لندن:برطانوی پارلیمنٹ سے اپنے خطاب میںملکہ برطانیہ نے برطانیہ کی یورپی یونین سے بے روک ٹوک اورمنظم علیحدگی کی تیاری کے سلسلے میں تیار کئے گئے متعدد نئے مجوزہ قوانین کا اعلان کر دیاہے۔ اہم خطاب میں 27 بلوں میں سے آٹھ بریگزٹ اور امیگریشن، تجارت اور ماہی گیری و کاشت کاری جیسے شعبوں پر اس کے اثرات سے متعلق تھے جن پر اگلے دوسال ساڑھے چھ سو ممبران پارلیمنٹ اپنی اپنی پارٹی پالیسی کے مطابق بحث کرینگے۔ملکہ عظمیٰ کی جانب سے ڈیڑھ گھنٹے پر مشتمل مسودہ سننے کے بعد وزیراعظم ٹیریسا مے نے ایم پیز پر زور دیا کہ وہ قومی تبدیلی کی اس گھڑی سے فائدہ اٹھاتے ہوئے متحد ہو کر زیادہ منصفانہ ملک کے لئے کام کریں۔ لیکن لیبر لیڈر جیریمائی کوربن کا کہنا ہے کہ وہ اپنے منشور کے متعدد وعدے ختم کرنے کے بعد اپنی اتھارٹی کھو چکی ہیں۔ آسودہ حال پنشنرز کے لئے ونٹر فیول الائونس کے خاتمہ، پنشن میں 2.5 فیصد خودکار اضافے کے خاتمہ، گرامر سکولوں میں توسیع اور تمام شیرخوار بچوں کے لئے سکول میں دوپہر کا مفت کھانا ختم کرنے کی تجاویز واپس لے لی گئیں جبکہ دیگر تجاویز مثلاً توانائی کے بلوں پر حد اور سماجی بہبود کے لئے فنڈز کی اصلاحات وغیرہ مشاورت کے لئے سامنے لائی جائیں گی۔ ڈیموکریٹک یونینسٹوں کے ساتھ ٹیریسا مے کی حکومت کی مدد کے بارے میں جاری مذاکرات کی اس صورتحال میں ڈائوننگ سٹریٹ کے ترجمان نے بتایا کہ انہیں یقین ہے کہ ملکہ برطانیہ کی تقریر سے آئندہ ہفتے کی ووٹنگ میں ہائوس آف کامنز کا اعتماد مضبوط ہو سکتا ہے۔ بریگزٹ سے ہٹ کر دیگر اہم تجاویز کے مطابق ایک سول لائبلٹی بل موٹر انشورنس کلیمز میں معاوضہ کے کلچر کے ازالہ کے لئے وضع کیا گیا ہے۔ گھریلو تشدد اور بدسلوکی کے بل کے ذریعے متاثرین کا ساتھ دینے کے لئے ایک ڈومیسٹک وائلنس اینڈ ابیوز کمشنر مقرر کیا جائے گا اور حکام کے جوابی اقدامات کی نگرانی کی جائے گی۔ ٹیننٹ فیس بل کے ذریعے مالکان کو کرایہ فیس کی وصولی سے روک دیا گیا ہے۔ برمنگھم سے کریو تک ریل رابطے کے دوسرے مرحلے کی اجازت دینے کے لئے ایک ہائی سپیڈ ٹو بل بھی ان بلوں میں شامل ہے۔ افراد کے حقوق مستحکم بنانے اور بھلا دئیے جانے کا حق متعارف کرانے کے لئے ایک ڈیٹا پروٹیکشن بل پیش کیا گیا ہے۔ آرمڈ فورسز بل کے ذریعے لوگوں کو جزوقتی اور لچکدار بنیاد پر خدمات انجام دینے کی اجازت دی گئی ہے۔ رواں سال کے آخر میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مجوزہ سرکاری دورہ برطانیہ کا کوئی ذکر نہیں کیا گیا جس سے بظاہر ان اشاروں کی تصدیق ہوتی ہے کہ اسے موخر کر دیا گیا ہے۔ وزراء کا کہنا تھا کہ اسے شامل نہ کرنے کی واحد وجہ یہی تھی کہ تاریخ مقرر نہیں ہوئی تھی۔ تقریر کے موقع پر ڈیوک آف ایڈنبرگ کے بجائے پرنس آف ویلز، ملکہ برطانیہ کے ہمراہ موجود تھے کیونکہ شہزادہ فلپ کو منگل کی رات ہسپتال داخل کرا دیا گیا تھا۔ ملکہ، گھوڑوں والی بگھی کے بجائے ایک کار میں پارلیمنٹ پہنچیں۔ ہائوس آف لارڈز چیمبر میں کوئی شاہی جلوس نہ تھا اور ملکہ برطانیہ نے عام دنوں کا لباس پہن رکھا تھا۔ ان کا تاج ان کی اپنی کار میں لارڈز پہنچایا گیا۔ 1974 کے بعد یہ پہلا موقع تھا کہ ریاست کے افتتاح کے موقع پر تقریباتی سرگرمیاں کم تھیں۔ قبل ازوقت انتخابات کے باعث وقت کے مسئلے کی بناء پر اسی پر اتفاق کیا گیا تھا کیونکہ ریہرسل اور ہفتے کے روز ہونے والی ٹروپنگ دی کلر تقریبات کے اوقات آپس میں الجھ رہے تھے۔