مقبول خبریں
المدثر ٹرسٹ کا مقصد معذور بچوں کو معاشرے کا مفید شہری بنانا ہے: سید مدثر حسین شاہ
گھرکی ٹرسٹ ٹیچنگ ہسپتال غریب افراد کو علاج معالجہ کی مفت سروس فراہم کرتا ہے:محمد نعیم
پاکستانی عوام نے 14مئی کے ملین مارچ کے حق میں فیصلہ دے دیا :پی ایس پی برطانیہ
نواز شریف نے مایوس کیا، ایران کیخلاف فریق نہیں بننا چاہیے تھا: عمران خان
نہتے کشمیریوں سے نمٹنے کیلئے سینٹرل ریزو پولیس فورس کے اہلکاروں کو خصوصی ٹریننگ
سید حسین شہیدسرورکا سیکرٹری تعلیم آزادکشمیرسیدشاہد محی الدین قادری کے اعزازمیں عشائیہ
آکسفورڈ:پاکستانی کمیونٹی کی جمیلہ آزاد اور ثوبیہ آفریدی لیبرپارٹی کے ٹکٹ پر کامیاب
کشمیر مہم: تحریک حق خود ارادیت یورپ نے پارلیمانی امیدواروں سے دستخط لینے شروع کر دیئے
اپنی آنکھیں کھول کے رکھنا طغیانی کے موسم میں
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستان ویمن چیمبر آف کامرس کے وفد کی پاکستان ہائی کمیشن آمد، کلچرل ایوننگ میں شرکت
لندن ... برطانیہ کے دورے پر آئے پاکستان ویمن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (ڈبلیو سی سی آئی) کے دس رکنی وفد نے لندن میں پاکستان کے ہائی کمشنر سید ابن عباس سے ملاقات کی۔ بانی چیئرپرسن ڈبلیو سی سی آئی ڈاکٹر شہلا جاوید اکرم کی زیرقیادت وفد نے ہائی کمشنر کو بتایا کہ ان کے دورے کا اصل مقصد برطانیہ کی کاروباری برادری کے ساتھ کاروباری روابط استوار کرنا ہے تاکہ دونوں ملکوں کے درمیان دوطرفہ کمرشل تعلقات کو بہتر بنایا جا سکے۔ ہائی کمشنر نے وفد کا پرتپاک خیرمقدم کیا اور ان کے دورے کو کامیاب بنانے کے لئے اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا۔ انہوں نے اس بات پر بالخصوص خوشی کا اظہار کیا کہ تمام خواتین پر مشتمل ایک تجارتی وفد نے پہلی بار یہ اقدام کیا ہے جو پاکستان کے بارے میں خیالات کو بہتر بنانے اور دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی حجم میں اضافے کے لئے اہم کردار ادا کرے گا۔ ہائی کمشنر کی دعوت پر وفد کی ارکان نے ہائی کمیشن کی کلچرل ایوننگ میں بھی شرکت کی۔ 28 نومبر سے 3 دسمبر تک کے اس دورے کے دوران یہ وفد برطانیہ کے مختلف بزنس چیمبرز میں ملاقاتیں کرے گا۔ وفد میں ٹیکسٹائل، فارماسوٹیکل، خوراک اور تعلیم کے شعبوں کی نمائندگی کرنے والی خواتین شامل ہیں۔ وفد کی ارکان میں بانی صدر ڈبلیو سی سی آئی ڈاکٹر شہلا جاوید اکرم، فائزہ امجدسلمیٰ مدثر، مونیکا خالد پراچہ، شازیہ اعجاز، حمیرہ عدیل، سمبلین عثمان، طاہرہ علی، سعدیہ الکمال، اور فضیلہ جہانگیر شامل ہیں۔ (رپورٹ: مونا بیگ)