مقبول خبریں
پاک سر زمین پارٹی کے زیر اہتمام پاکستان کے 70ویں یوم آزادی کے موقع پر رنگا رنگ تقریب
شیڈو چانسلر جان مکڈونل کی ایم پی تھرک لیبر پارٹی کی دعوت پر گریز آمد
کشمیری مسئلہ کشمیر کے پُرامن حل کے لیے عالمی برادری کے کردار کے خواہش مند ہیں
اسحاق ڈار کے خلاف ریفرنس، نیب نے ایس ای سی پی حکام کو طلب کر لیا
بھارت کا یوم آزادی،دنیا بھر میں کشمیریوں نے یوم سیاہ منایا، مودی کے پتلے نذرآتش
حسین شہید سرور کا سجادہ نشین بساہاں شریف پیر سید علی رضابخاری کے اعزاز میں استقبالیہ
عمران خان نے تمام بڑے چوروں کو عوامی عدالتوں میں لا کھڑا کیا ہے:بابر اعوان
خالد محمود خالق سے ’’ ڈی آئی جی ‘‘مظفر آباد ہیڈ کوارٹرز آزاد کشمیر پولیس کی ملاقات
کرپٹ خان
پکچرگیلری
Advertisement
جامعہ اسلامیہ غوثیہ ٹرسٹ لوٹن میں تحفظ عقیدہ ختم نبوت کے حوالے سے اہم اجلاس
لندن :برطانیہ بھر کے ممتاز علمائے کرام،مساجد کمیٹیوں کے عہدیداروں،اراکین کونسلرز حضرات،مذہبی و سماجی راہنمائوں نے حکومت برطانیہ سے اپیل کی تھی کہ وہ منکرین ختم نبوت،قادیانیوں،مرزائیوں کو مسلمانوں کا نمائندہ ہرگز تسلیم نہ کریں کیونکہ انہوں نے عقیدہ ختم نبوت سے انکار کر کے اپنے آ پ کو امت مسلمہ سے علیحدہ کر لیا ہے،عقیدہ ختم نبوت پر کامل ایمان بھی دین اسلام کی بنیادی اساس ہے اور اس عقیدہ ختم نبوت پر پوری ملت اسلامیہ کا اجماع ہے،علمائے کرام نے کہا کہ حکومتی وزرائ،حکومتی نمائندے،میئرز،کونسلرز جب کبھی بھی منکرین ختم نبوت کے اجلاسوں میں شرکت کیلئے جائیں تو انہیں غیر مسلم اقلیت کے طور پر شمار کرتے ہوئے اور سمجھتے ہوئے جائیں،علمائے کرام نے حکومت برطانیہ پر واضع کیا کہ ہماری اطلاعات کے مطابق بسر اوقات قادیانیوں کو مسلمانوں کا نمائندہ سمجھ کر مشاورت کیلئے بلایا جا رہا ہے جو برطانیہ میں مقیم لاکھوں مسلمانوں کو کسی بھی صورت میں قبول نہیں،ان خیالات کا اظہار علمائے کرام کونسلرز،مذہبی و سماجی راہنمائوں اور مساجد کمیٹیوں کے اراکین نے جامعہ اسلامیہ غوثیہ ٹرسٹ لوٹن میں تحفظ عقیدہ ختم نبوت کے حوالے سے منعقد ہونے والے اہم اجلاس میں کیا،اس اہم اجلاس میں لندن،بیڈ فورڈ،ہائی ویکمب،مانچسٹر،برمنگھم،شفیلڈ،اوسلو،ڈڈلے،پسٹر،بری،ہیلی فیکس،بریڈ فورڈ،چشم،معسلو،وٹفورڈ اور دیگر شہروں سے علمائے کرام اور زعماء نے شرکت کر کے عقیدہ ختم نبوت کے تحفظ کیلئے ہر قسم کی قربانی دینے کیلئے تجدید عہد کرتے ہوئے ان کے اسلام کے بارے میں منفی پروپیگنڈے کو رد کیا جائے گا اور نوجوان نسل کو عقیدہ ختم نبوت سے آگاہی کیلئے خصوصی کانفرسوں،سیمینارز اور ورکشاپوں کا اہتمام کیا جائے گا، جس میں خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے برطانیہ کے ممتاز عالم دین خطیب ملت علامہ قاضی عبدالعزیز چشتی نے کہا کہ منکرین ختم نبوت اسلام کے مقدس نام کو استعمال کر کے کس طرح توہین رسالت مآب کا ارتکاب کر کے غلط نظریات و افکار کا پرچار کر کے نوجوان نسل کو گمراہ کرنے کے درپے ہیں اور بعض انگلش میڈیا کو اپنے مضموم عقائد و نظریات کو پھیلانے کیلئے استعمال کر رہے ہبں اور بعض ممبران پارلیمنٹ اور حکومتی اداروں کو غلط معلومات پہنچا کر ان کے ذریعے عقیدہ ختم نبوت کے بارے میں تشریحات پیش کر کے علمائے کرام،خطبائ،مبلغین اسلام کے خلاف نفرت پھیلا رہے ہیں انہوں نے واضح کیا کہ کس طرح گزشتہ دنوں میں ہونیوالی عالمی تاجدار ختم نبوت سنی کانفرنس کے انعقاد کے راستے میں روڑھے اٹکائے اور بعد میں بھی میڈیا کے ذریعے غلط اورمنفی پروپیگنڈے کئے گئے مگر عاشقان رسول نے اس کانفرنس کوکامیاب کر کے اپنے کریم آقاؐ سے عقیدت و محبت کا اظہار کر کے اس کا منہ توڑ جواب دیا،اجلاس کا آغاز مولانا قاری اللہ بخش نقشبندی کی تلاوت،علامہ قاری محمد حفیظ الرحمان چشتی کی نعت سے ہوا جبکہ صدارت خطیب اسلام پیر سید احمد حسین ترمذی نے کی،برطانیہ کے ممتاز عالم دین ہائی ویکمب کے خطیب العظم علامہ صاحبزادہ غلام جیلانی الازہری نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلام ایک مکمل نظام حیات ہے جو پوری انسانیت کیلئے ہدایت اور رہنمائی کا پیغام ہے اور قرآن پاک کے پیغام امن و محبت اور نبی پاکؐ کی سیرت و کردار ہم سب کیلئے مشعل راہ ہے اور عقیدہ ختم نبوت کا تحفظ اور تحفظ ناموس رسالت ہمارا ورثہ ہے جو ہمارے اکابرین و اسلاف نے بے دریغ قربانیاں دیکر ہم تک پہنچایا ہے اور اس پاکیزہ مشن کیلئے ہم کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے انہوں نے کہا کہ یہ مقام افسوس ہے کہ پاکستان میں درپیش آنیوالے واقعات کے ذریعے برطانیہ میں مقیم علمائے کرام کو بھی پریشانیوں ک سامنا کرنا پڑتا مگر الحمد اللہ تحفظ ناموس رسالت کیلئے علمائے کرام کی ثابت قدمی نے انہیں مزید بلند و بالا مقام عطا کیا ہے،آج کے دور میں ہمیں متحد و منظم ہو کر نبی پاکؐ کے عشق و محبت اور اتباع رسول کا درس دیناہو گا اور آج کا یہ اہم اجلاس برطانیہ بھر کے علمائے کرام کو اتحاد و اخوت و محبت کا پیام بر ثابت ہو گا۔