مقبول خبریں
پاک سر زمین پارٹی کے زیر اہتمام پاکستان کے 70ویں یوم آزادی کے موقع پر رنگا رنگ تقریب
شیڈو چانسلر جان مکڈونل کی ایم پی تھرک لیبر پارٹی کی دعوت پر گریز آمد
کشمیری مسئلہ کشمیر کے پُرامن حل کے لیے عالمی برادری کے کردار کے خواہش مند ہیں
اسحاق ڈار کے خلاف ریفرنس، نیب نے ایس ای سی پی حکام کو طلب کر لیا
بھارت کا یوم آزادی،دنیا بھر میں کشمیریوں نے یوم سیاہ منایا، مودی کے پتلے نذرآتش
حسین شہید سرور کا سجادہ نشین بساہاں شریف پیر سید علی رضابخاری کے اعزاز میں استقبالیہ
عمران خان نے تمام بڑے چوروں کو عوامی عدالتوں میں لا کھڑا کیا ہے:بابر اعوان
خالد محمود خالق سے ’’ ڈی آئی جی ‘‘مظفر آباد ہیڈ کوارٹرز آزاد کشمیر پولیس کی ملاقات
کرپٹ خان
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیری رہنمائوں عبدالرشید ترابی اور چودھری یسٰین کی ملاقات، لندن مظاہروں بارے گفتگو
سٹوک آن ٹرنٹ: کل جماعتی رابطہ کمیٹی آزاد کشمیر کے کنوینئر و امیر جماعت اسلامی عبدالرشید ترابی اور قانون ساز اسمبلی آزاد جموں کشمیر میں قائد حزب اختلاف و پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما چودھری یسیٰن نے مشترکہ طور پر برطانیہ میں مقیم کشمیری اور پاکستانی کمیونٹی سے اپیل کی ہے کہ وہ 27 اکتوبر کو ہندوستانی افواج کے مقبوضہ کشمیر پر جبری قبضہ کیخلاف یوم سیاہ کے موقع پر بھارتی ہائی کمیشن اور 10 ڈاؤننگ سٹریٹ میں ہونے والے احتجاجی مظاہروں میں بھرپور طریقے سے شرکت کریں۔ اتوار کے روز چودھری یسٰین کی رہائشگاہ پر ہونے والی ملاقات میں یہ فیصلہ کیا گیا کہ دونوں مظاہروں کو کامیاب بنانے کیلئے دونوں رہنما مختلف شہروں کا دورہ کریں گے جبکہ عبدالرشید ترابی اور چودھری یسٰین دونوں مظاہروں سے خطاب کریں گے۔دونوں رہنماؤں نے دوران ملاقات گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں اس وقت بھارت انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی کررہا ہے جبکہ کشمیری عوام انتہائی ثابت قدمی سے بھارتی افواج کے ظلم سہہ رہی ہے اقوام عالم کو اس ظلم اور ذیادتی کا فوری نوٹس لینا چاہئے۔برطانیہ میں مقیم کشمیری اور پاکستانی کمیونٹی کا یہ فرض بنتا ہے کہ وہ اپنے مظلوم بھائیوں کی آواز کو بین الاقوامی برادری تک پہنچانے کے لیے ان دونوں مظاہروں میں بھرپور شرکت کریں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت دنیا کی آنکھوں میں مزید دھول نہیں جھونک سکتا کشمیر کے نوجوان ۔ بوڑھے ۔بچے اور خواتین اپنا آزادی کا حق لینے کے لئے ایک بار پھر اٹھ کھڑے ہوئے ہیں ۔اب ہمارا یہ فرض بنتا ہے کہ ہم ان کا ساتھ دیں اور اقوام عالم کو بھارت پر دباؤ ڈالنے پر مجبور کریں اور وہ اسی صورت میں ممکن ہے جب ہم سب متحد ہوں اسی لیے یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ ان دونوں مظاہروں کو کامیاب کرنے کے لیے ایک مشترکہ حکمت عملی اپنائی جائے۔