مقبول خبریں
مسرت چوہدری اور اختر چوہدری کا لارڈ مئیر عابد چوہان کے اعزاز میں ظہرانہ
مسئلہ کشمیر پربحث کیلئے ڈیبی ابراھم کیطرف سے برطانوی پارلیمنٹ میں تحریک پیش
پاکستانی نژاد پیشہ ورانہ ماہرین اور طلبہ جہاں بھی ہوں اقدار کی پاسداری کریں: نفیس زکریا
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
اسرار احمد راجہ کی کتاب کی تقریب رونمائی ،مئیر آف لوٹن کونسلر طاہر ملک ودیگرافراد کی شرکت
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
ہر انسان کو اس کے مذہب کے مطابق تدفین کی اجازت ملنی چاہئے: سعیدہ وارثی و دیگر
Corona virus
پکچرگیلری
Advertisement
حکومت ہند کوقائد اعظم سمیت تمام پاکستانی لیڈروں کی آزادی سے قبل کی تقاریر عام کرنے کا حکم
نئی دہلی ...انڈین رائٹ ٹو انفارمیشن محکمے کے چیف کمشنر نے ایک درخواست پر سماعت کرتے ہوئے حکومت کو حکم دیا ہے کہ 1947سے پہلے کی تمام پاکستانی رہنماؤں کی تقاریر کو عام کیا جاے۔ اب تک بھارتی حکومت یہ کہہ کر ان تقاریر کوعام کرنے سے گریز کرتی رہی ہے کہ اس سے دونوں ملکوں کے تعلقات پر اثر پڑ سکتا ہے۔ چیف انفارمیشن کمشنر ستيانند مشرا نے اپنے فیصلے میں کہا کہ کسی بھی سرکاری افسر کے لیے یہ کہہ دینا آسان ہے کہ پاکستان چلے جانے والے رہنماؤں سے متعلق کسی بھی معلومات کو خفیہ رکھنا چاہیےلیکن یہ ایک پیچھے لوٹنے والا قدم ہوگا۔ ستيانند مشرا نے کہا کہ عام آدمی اور تاریخ کے طلباء کی ہندوستانی تاریخ کے اس انتہائی دلچسپ پہلو کے بارے میں جاننے میں ہمیشہ دلچسپی رہی ہے، اس لیے یہ حکومت کا فرض ہے کہ وہ تقاریر کے ایسے تمام ریکارڈز کو عوام کو مفت فراہم کرے۔ اس سے پہلے حکومت نے دفعہ 8 (1) (a) کا حوالہ دیتے ہوئے یہ ریکارڈ دینے سے انکار کر دیا تھا۔ پٹیشنر سبھاش اگروال کا کہنا ہے کہ محمد علی جناح کی تقاریر سے یہ سچ سامنے آ جائے گا کہ پاکستان کے بانی کے خوابوں کا پاکستان نہیں بنا، بلکہ ایک قدامت پسند پاکستان بن کر رہ گیا ہے۔