مقبول خبریں
برادری ازم پر یقین رکھتے ہیں اور نہ علاقائی تعصب پر اہلیت کی بنیاد پر ڈاکٹر شاہد کی حمائت کر رہے ہیں
اسلام میں جسطرح خدمت انسانی کی حوصلہ افزائی کی گئی اسکی مثال نہیں ملتی: الصف چیریٹی کی امدادی تقریب
لالچی اور خودغرض ٹور آپریٹرز ں نے اللہ کے مہمانوں سے لوٹ کھسوٹ کا بازار گرم کر رکھا ہے
احتجاج کرنیوالے وزیر اعظم ہائوس آ کر مذاکرات کریں، نواز شریف
کشمیریوں نے بھارت کو بتا دیا وہ جدو جہد آزادی سے پیچھے نہیں ہٹیں گے،علی گیلانی
شیراز خان کی برطانیہ واپسی پر چیئرمین سلطان باہو پیر نیازالحسن سروری قادری کی والدہ کی وفات پر تعزیت
کشمیری اس امر پر متفق ہیں کہ ووٹ انہی کو دیا جائے گا جوحق خود ارادیت کی حمائت کرتے ہیں:کونسلر محبوب بھٹی
برطانیہ میں مقیم کمیونٹی پاکستان سے بے پناہ محبت کرتی ہے، . لارڈ میئر بریڈفورڈکا چھچھ ایسوسی ایشن تقریب سے خطاب
حکومت پنجاب کا اوورسیز کمشنر آفس
پکچرگیلری
Advertisement
جنگ بندی میں توسیع ، شکایات کا ازالہ کیا جائیگا ، حکومتی و طالبان کمیٹیوں میں اتفاق
اسلام آباد ... وزیر داخلہ چودھری نثار علی کی سربراہی میں حکومت اور طالبان کی مذاکراتی کمیٹیوں کا مشترکہ اجلاس ہوا جس میں مذاکرات میں اب تک ہونے والی پیشرفت کا جائزہ لیا گیا۔کمیٹیوں نے اس بات پر اتفاق کیا کہ جنگ بندی میں توسیع کی جائے گی اور دونوں جانب کی شکایات کا ازالہ کیا جائے گا اس مقصد کیلئے ایک ذیلی کمیٹی بنانے کا فیصلہ بھی کیا گیا ۔اجلاس میں مذاکراتی عمل کو آگے بڑھانے کیلئے حکمت عملی پر بھی غور کیاگیا جبکہ طالبان کی جانب سے فائربندی کے خاتمے کے بعد کی صورتحال اور سویلین قیدیوں کی رہائی کے معاملات پربھی گفتگوہوئی۔اس سے پہلے طالبان نے غیرعسکری قیدیوں کی رہائی اور پیس زون کے مطالبے کے باعث جنگ بندی میں مزید توسیع نہ کرنے کا اعلان کیا تھا جس کے بعد مذاکرات تعطل کا شکار ہو گئے تھے ۔اجلاس میں مذاکرات کا تعطل ختم کرنے پر بات کی گئی اور فیصلہ کیا گیا کہ مذاکرات جاری رکھے جائیں گے ۔ذرائع کا کہنا تھا بات چیت کے دوران حکومت کی جانب سے طالبان کے جنگ بندی کے خاتمے پر تحفظات کا اظہار اور اس رویے کو منفی قرار دیا گیا ۔ ذرائع نے بتایا وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ حکومت کی جانب سے طالبان کی شرائط اور غیر عسکری قیدیوں کے مطالبے کا جائزہ لیا جارہا ہے یہ ایک پیچیدہ امر ہے لہذا اس پر فیصلے کے لیے کچھ وقت ملنا چاہئے ،طا لبان بھی جلد بازی کا مظاہرہ نہ کریں اور مناسب وقت دیں ۔ وزیر داخلہ نے طالبان کمیٹی کو اس سلسلے میں اب تک کیے جانے والے کام کی تفصیل سے آگاہ کیا اور اس حوالے سے فوج کے تحفظات کا بھی ذکر کیا اور کہا ان تحفظات کو دور کرنے کی کوشش کی جارہی ہے تاکہ غیر عسکری قیدیوں کی رہائی ممکن ہو سکے ۔ دونوں کمیٹیوں نے جنگ بندی میں توسیع پر بھی اتفاق کیا اور فیصلہ کیا گیا کہ اعتماد کی فضا کو مزید بہتر بنانے کیلئے دونوں اطراف سے اقدامات کئے جائیں گے طالبان شوریٰ سے غیر جنگجو قیدیوں کی رہائی کیلئے بات کی جائیگی ۔ اجلاس میں طالبان کمیٹی کے سربراہ مولانا سمیع الحق ، حبیب اللہ خٹک، فواد حسن فواد ،ارباب عارف،رستم شاہ مہمند نے شرکت کی۔ طالبان کمیٹی نے حکومت سے ایک بار پھر طالبان کے غیر عسکری قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ۔ذرائع کے مطابق سرکاری کمیٹی نے بھی حکومت کی جانب سے بعض تحفظات کا اظہارکیا اور دونوں کمیٹیوں نے اتفاق رائے سے شکایات کے ازالے کیلئے مشترکہ سب کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کیا جو فریقین کی شکایات دور کرنے کیلئے سفارشات مرتب کریگی۔حکومتی اور طالبان کمیٹیوں نے طالبان شوریٰ سے جلد ملاقات کرنے پر بھی اتفاق کیا ۔