مقبول خبریں
کونسلر شکیل احمد تیسری بار لیبر پارٹی کی طرف سے مئی 2020ء کے لئے امیدوار نامزد
کشمیر کی حیثیت میں یکطرفہ بھارتی تبدیلی جنوبی ایشیا میں خطرناک بگاڑکا باعث ہوگی
پاک سر زمین پارٹی کے مرکزی جوائنٹ سیکرٹری محمد رضا کی زیر صدارت عہدیداران و کارکنان کا اجلاس
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
حلقہ ِ ارباب ِ ذوق کے ادبی پروگرام میں پاکستانیوں اور کشمیری کونسلرز کی بڑی تعداد میں شرکت
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
پروفیٹک گفٹس ویڈنگ اینڈ ایونٹس آرگنائزر کے زیر اہتمام ایشین ویڈنگ اینڈ پلانرز ایونٹ کا انعقاد
میرے تمام خواب نظاروں سے جل گئے
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستان میں عدلیہ آزادانہ و غیر جانبدارانہ فیصلے کر رہی ہے :چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ
مانچسٹر (محمد فیاض بشیر) چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ سردار محمد شمیم خان کی وفد کے ساتھ برطانیہ آمد پر مانچسٹر کے مقامی ریسٹورنٹ ہال میں سابق ڈپٹی پراسکیوٹر جنرل پنجاب رانا بختیار نے پر تکلف عشائیہ دیا ۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سردار محمد شمیم خان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں عدلیہ آزادانہ و غیر جانبدارانہ فیصلے کر رہی ہے ہم پر کسی قسم کا سیاسی و عسکری دباؤ نہیں ہے جب قانون کے مطابق فیصلے سیاستدانوں کے خلاف آتے ہیں تو وہ محض سیاسی مقاصد کے حصول کو ممکن بنانے کے لیے اسے غلط رنگ دیتے ہیں عدلیہ پہلے کبھی بھی اتنی آزاد و خود مختار نہیں ہو ئی جتنی اب ہے ۔ ان کا مذید کہنا تھا کہ عدالتوں میں عرصہ دراز سے زیر التواء مقدمات کا فیصلہ نہ ہونا بڑا المیہ ہے اسکی بنیادی وجہ عدالتوں میں ججوں کی تعداد میں کمی ہے ہم نے اس بارے حکومت وقت سے مطالبہ کیا ہے لیکن ابھی تک خاطر خواہ اضافہ نہیں ہو سکا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ عدلیہ پر جانبداری کا الزام بے بنیاد من گھڑت ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ بیرون ممالک بسنے والے پاکستانیوں کے حقوق کو قانونی حیثیت حاصل ہے ہم آپکے حقوق کا دفاع کریں گے کیونکہ بیرون ممالک بسنے والے پاکستانی مادر وطن کی تعمیر وترقی میں نمایاں کردار ادا کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ سستے اور جلدی اور قانون کے عین مطابق غیر جانبدارانہ فیصلوں سے ہی انصاف کے تقاضے پورے ہوتے ہیں یہ تب ممکن ہے جب مقدمات کے فیصلے بروقت ہوں اسکے لیے وسائل کی دستیابی اہم ہے ۔ لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس جواد حسن کا کہنا تھا کہ بیرون ممالک بسنے والے پاکستانیوں کے تمام حقوق کو پاکستان میں قانون کے مطابق تحفظ حاصل ہے اور اگر کوئ مسئلہ ہے تو اوورسیز کے قائم سیل سے رجوع کریں آپکی شکایات کا بروقت ازالہ کیا جائے گا اس وقت پاکستان میں عدلیہ آزاد ہے ہم سب بغیر کسی خوف و لالچ کے مقدمات کا قانون کے مطابق فیصلے کرتے ہیں اور مکمل غیر جانبداری ہمارا طرہ امتیاز ہے ۔ جسٹس ہمایوں امتیاز، ڈائریکٹر اوورسیز سیل لاہور ہائی کورٹ خالد سعید وٹو ،سینئیر سول جج شکیب عمران قمر نے بھی پاکستان کے نظام عدل پر روشنی ڈالی اور بیرون ممالک بسنے والے پاکستانیوں کے قانونی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کا اعادہ کیا۔ عشائیہ کے میزبان سابق پراسیکیوٹر جنرل پنجاب رانا بختیار کا کہنا تھا کہ عشائیہ کا مقصد پاکستان سے آئے مہمانوں کو برطانیہ میں بسنے والی پاکستانی کمیونٹی کے ماہر قانون دانوں سے باہمی ملاقات کروانا مقصود تھی تاکہ پاکستان میں عدلیہ کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے باہمی تبادلہ خیال کیا جا سکے ۔ ان کا مذید کہنا تھا کہ لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سردار محمد شمیم خان ،جسٹس جواد حسن و دیگر جج صاحبان ایمانداری،جانفشانی اور قانون کے عین مطابق غیر جانبدارانہ فیصلے کر رہے ہیں جس سے عدلیہ کی آزادی عیاں ہے اسکا سہرا موجودہ حکومت اور وزیراعظم پاکستان عمران خان کو جاتا ہے جنہوں نے عدلیہ کی آزادی و خودمختاری غریب امیر کے لیے یکساں انصاف کے نظام کا پختہ ارادہ کیا ہوا ہے مہذب قوموں کی ترقی میں انصاف کو بنیادی اہمیت حاصل ہے وہ قوم اور معاشرہ کبھی آگے نہیں بڑھ سکتا جب تک نظام عدل سب کے لیے برابر ہو ۔ عشائیہ تقریب کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہوا ڈاکٹر محمد یونس پرواز کو یہ شرف نصیب ہوا اسکے بعد انہوں نے بارگاہ رسالت میں نعت رسول مقبول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پیش کی۔ ممبران پارلیمنٹ و شیڈو وزرا محمد افضل خان،یاسمین قریشی،پاکستانی قونصلیٹ مانچسٹر میں تعینات کمیونٹی ویلفیئر اتاشی مسز فضہ نیازی، ماہر قانون دان بیرسٹر امجد ملک، بیرسٹر مقبول ملک، شاہد، ڈاکٹر لیاقت ملک، بیرسٹر شازیہ انجم، کاروباری،سیاسی و کمیونٹی شخصیات مسرت چوہدری،انعام سحری، کونسلر نعیم الحسن، سابق پاکستانی کرکٹر محمد طارق، ،پاکستان کی سنئیر سیاسی شخصیت ممبر قومی اسمبلی ریاض فتیانہ و دیگر سرکردہ شخصیات نے شرکت کی۔