مقبول خبریں
چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام سے راجہ نجابت اورحریت رہنماء عبدالحمیدلون کی ملاقات
کرالے میں اوورسیزپاکستانیوں کی میٹنگ،مختلف طبقہ ہائے فکر کے افراد کی شرکت
دعوت اسلامی برمنگھم کے زیر اہتمام خراب موسم کے باوجودجشن عید میلاد النبیؐ کا جلوس
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سردار عتیق کی قیادت میں جدوجہد آزادی پایہ تکمیل تک پہنچائیں گے:رہنما ایم سی
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
مقبوضہ کشمیرمظالم:عالمی طاقتوں، اقوام متحدہ کو کردار ادا کرنا ہو گا : ڈاکٹر سجاد کریم
بلقیس بانو زندہ کیوں؟؟؟؟؟
پکچرگیلری
Advertisement
شیڈو وزیر افضل خان کا برطانوی پارلیمنٹ میں نیوزی لینڈ سانحہ کے شہداء کو خراج عقیدت
لندن (خصوصی رپورٹ: اکرم عابد)پاکستانی نژاد برطانوی پارلیمنٹ کے ممبر و شیڈو وزیر افضل خان نے برطانوی پارلیمنٹ کے اندر کہا کہ آج پارلیمنٹ نے نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی مسجد کے شہداء کو خراج عقیدت پیش کیا اور اسکی سانحہ کی آڑ میں برطانیہ کے شہر برمنگھم اور نیوکاسل میں شر پسند عناصر نے مساجد پر حملہ کیا۔ کچھ عرصہ پہلے حکمران جماعت کنزرویٹو کے پچاس کونسلرز کو نسلی امتیاز اور اسلاموفوبیا کی وجہ سے معطل کر کے دوبارہ رکنیت بحال کر دی ہے اور کنزرویٹو پارٹی کے چیئرمین اسلاموفوبیا کے تلفظ کی ادائیگی صحیح طور پر نہیں کر سکتے وہ کیسے اپنی جماعت کے ممبران کی انکوائری کریں گے۔ انہوں نے وزیراعظم ٹریسا مے کی توجہ دوبارہ اس طرف بھی دلائی کہ برمنگھم اور نیوکاسل میں بھی مساجد پر حملے کیے گئے ۔اس کے جواب میں وزیراعظم ٹریسا مے کا کہنا تھا کہ کنزرویٹو پارٹی کے کسی بھی منتخب نمائندے کے خلاف اسلاموفوبیا یا پھر کوئی اور الزام ہو اسکی تحقیقات کی جاتی ۔برمنگھم اور نیوکاسل مساجد میں ہونے والے حملے کی بھرپور مذمت کرتی ہوں ۔ان کا مذید کہنا تھا کہ مساجد ہوں یا پھر کوئی اور عبادت گاہ ایسے نہیں ہونا چاہیئے اور وزارت داخلہ نے مساجد کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے خصوصی فنڈنگ کر دی جاتی ہے ہمارے معاشرے میں شرپسند عناصر کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ یاد رہے کہ کنزرویٹو پارٹی کے پچاس لوکل کونسلرز کی جماعت سے معطلی اور بحالی بارے افضل خان کے سوال کو وزیر اعظم ٹریسا مے نے پھر گول مول جواب دیا جس پر افضل خان پارلیمنٹ میں سر ہلاتے رہے۔